سوره حدید/ آیه 25

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 
تفسیر نمونہ جلد 23
١۔یہ کہ نبرأھا مرجع ضمیر کیا چیزہے اس میں کئی احتمال ہیں، بعض اس کامرجع زمین اورانفس کوسمجھتے ہیں بعض مصیبت کواوربعض سب کو لیکن آ یت کے لب ولہجے پرتوجہ کرتے ہوئے پہلے معنی مناسب ہیں کیونکہ یہ کہنا چاہتاہے کہ زمین وآسمان اورتمہاری خلقت سے پہلے ان مصائب کی پیش بینی ہوئی ہے ۔
٢۔ تفسیر علی بن ابراہیم نقل نورالثقلین ،جلد ٥ ،صفحہ ٢٤٧۔
٣۔جلد ٢ صفحہ ٥١٥سے آگے اور سُورہ نساء کی آ یت ٧٨ ،٧٩ کے ذیل میں بھی ایک اور بحث تھی ،جوزیربحث آ یات کے ساتھ مناسبت رکھتی ہے ۔
٤۔رُوح البیان ،جلد ٩،صفحہ ٣٧٥۔
٥۔ نہج البلاغہ کلمات قصار کلمہ ٤٣٩۔
٦۔ قتیبہ بن سعید ایک محدّث ہے جومالک ابن انس سے روایت کرتاہے (منتہی الادب)
٧۔تفسیر ابوالفتوح رازی ،جلد ١١ صفحہ ٥٣۔ انہی معانی کی مثال تفسیررُوح البیان ،جلد ٩ ،صفحہ ٣٦٧ پرنقل کی گئی ہے ۔
٨۔ (الَّذینَ یَبْخَلُونَ...)بدل ہے کل مختارفخور ( تفسیر کشاف درذیل آیات زیربحث ) ضمناً توجہ کرنی چاہیئے کہ بدل اورمبدل منہ میں معرفہ اورنکرہ کاتطابق شرط نہیں ہے ۔
12
13
14
15
16
17
18
19
20
Lotus
Mitra
Nazanin
Titr
Tahoma