١۔ اہل نفاق کے ساتھ بے مقصد شرکتِ عمل

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 
تفسیر نمونہ جلد 23
جوکچھ مندرجہ بالا آتیوں میں منافقوں کی عہد شکنی اور اپنے دوستوں کوسخت لمحات میں تنہا چھوڑ دینے کے بارے میں آیاہے ، یہ ایک ایسی چیزہے جس کے نمونے ہم نے بارہا اپنی زندگی میں دیکھے ہیں ۔یہ لوگ گمراہ کرنے والے شیطان کی طرح ہرشخص کے دل میں وسوسہ ڈالتے ہیں ، ان سے ہرقسم کی مدد کاوعدہ کرتے ہیں، انہیں میدانِ حوادث میں بھیجتے ہیں اورانواع واقسام کے گناہوں میں آلودہ کرتے ہیں لیکن بحرانی لمحات میں وسط میدان میں چھوڑ کراپنی جان کی حفاظت اورمفادِ ذات کے لیے بھاگ کھڑے ہوتے ہیں ۔ یہ ان لوگوں کی سرگزشت ہے ،جومنافقین کے شریک اوران کے ساتھ عہد ِ محبت استوار کرنے والے افراد ہیں ۔ اس کازندہ نمونہ ہمارے زمانہ میں وہ عہد وپیمان ہیں جوسپر طاقتیں (ہمارے زمانے کے شیاطین ) ان ممالک کے سربراہوں سے کرتے ہیں جوان سے وابستہ ہیں اور ہم نے بارہا دیکھاہے کہ یہ وابستہ ممالک ، جنہوںنے اپنی ساری بضاعت طبق اخلاص میں رکھ کران شیطان صفت حامیوں کے سامنے پیش کردی ہے ، سخت حوادث میں مکمل طورپر تنہارہ جاتے ہیں اور ہرجگہ سے دھتکارے جاتے ہیں ۔ یہ وہ منزل ہے جہاں ہم قرآن کے اس پیغام سے زیادہ شناسائی حاصل کرسکتے ہیں جوکہتاہے:(کمثل الشیطان اذ قال للا نسان اکفر فلما کفر قال انی بری ،منک انی اخاف اللہ ربّ العالمین )ان کاکام شیطان کی مانند ہے جس نے انسان سے کہا کافرہو جا،جب وہ کافرہوگیا تواس نے کہا میں تجھ سے بیزار ہوں ۔میں اس خدا سے ڈرتاہوں جوعالمین کا پروردگار ہے ۔
 ٧۔مجمع البیام ،جلد ٩ ،صفحہ ٢٦٥،تفسیر قرطبی جلد ٩،صفحہ ٦٥١٨اور تفسیر رُوح البیان میں یہ واقعہ زیادہ تفصیل کے ساتھ آ یاہے ،جلد ٩ ،صفحہ ٤٤٦۔
12
13
14
15
16
17
18
19
20
Lotus
Mitra
Nazanin
Titr
Tahoma