چوالیسویں فصل دفاع کے احکام

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ذخیره کریں
 
استفتائات جدید 03
حدودکے مقدماتتینتالیسویں فصل امربالمعروف ونہی عن المنکر

سوال ۸۹۷ -- ان نقصانات اور صدمات کے بارے میں فرمائیے جو دفاع کے مقام میں اشخاص پر وارد ہوتے ہیں:

الف) چنانچہ کوئی شخص اپنے دفاع میں ایسا عمل کرنے پر مجبور ہو جائے جس سے اس کو جسمانی نقصان پہنچے ، یا اس کے مرنے کا سبب بن جائے اس کی موت یا نقصانات کی ذمہ داری کس پر ہوگی؟ مثال کے طور پر کوئی شخص جنسی تجاوز سے بچنے کے لئے اپنے آپ کو شیشے سے ٹکرالے اور زخمی ہوجائے یا بلندی سے کودنے کی وجہ سے اس کا پیر ٹوٹ جائے، یا مرجائے تو اس صورت میں اس کا ضامن کون ہے؟

جواب: اگر حملہ آور اس کو دھکادے، یا زخمی ہونے یابلندی سے گرنے کا سبب بنے تو وہ ہی ذمہ دار ہے ، لیکن اگر خود اپنی نجات کے لئے ایسا کام کرے تو دیت یا قصاص کسی پر نہیں ہے؛ ہرچند حملہ آور کو سخت سزا دی جائے۔

ب) گذشتہ مفروضہ میں ، کیا اس صورت کے درمیان جبکہ مدافع راہ فرار کو اس کے اندر منحصر جانے جس کا اس نے انتخاب کیا ہے اور اس صورت کے درمیان جبکہ فرار کا دوسرا راستہ بھی تھا لیکن اس نے جلدی یا خوف کی وجہ سے اسی طریقے پر عمل کیا، کوئی فرق ہے؟

جواب: دیت کے لحاظ سے کوئی فرق نہیں ہے، لیکن سزا کے اعتبار سے فرق ہے۔

سوال ۸۹۸ -- اگر اغوا شدہ شخص موت کے دہانے پر ہو اور اس سے فرار کا ، مقاتلہ(لڑائی) کے علاوہ کوئی اور راستہ بھی نہ ہو (مثلاً اغوا کرنے والوں کے مسلحا نہ پہرے میں ہو) اس کی تکلیف کیا ہے؟

جواب: اپنے سے دفاع کرسکتا ہے ؛ ہرچند مدمقابل کی نابودی کا سبب ہوجائے۔

سوال ۸۹۹ -- کیا حرام کام مثلاً لواط اور زنا پر اکراہ اورمجبور کرنے والے کا خونمعاف ہے؟ اگر اس کو قتل کرنے کے سوا بچنے کا کوئی اور راستہ نہ ہو تو کیسا ہے؟

جواب: جبکہ اس کے قتل کے علاوہ کوئی اور راستہ نہ ہو، تو اس کا خون معاف ہے۔

سوال ۹۰۰ -- ایک مسلمان مرد آدھی رات کو اپنی مسکونی منزل میں داخل ہوتا ہے اور بغیر ارادہ کے اور اس لاعلمی کے ساتھ کہ ایک اجنبی اس کے گھر میں موجود ہے، ایسے شخص کے روبرو ہوتا ہے کہ جو دوبار اس کی ناموس کی ابرو ریزی کا سبب بنا تھا اور عدالت سے سزا پاچکا تھا ، وہ گھر کی موجودہ حالت اور اس شخص کی جسمانی وضعیت اور دیگر معقول قرائن سے علم حاصل کرلےتا ہے کہ وہ شخص اس کی ناموس پر تجاوز کرنے کے ارادہ سے اس کے گھر میں داخل ہوا تھا،لہٰذا وہ اس سے گتھم گھتا ہونے لگتا ہے، ایک خاض وضیعت اور بحرانی وغافلگیر کیفیت میں کہ جس میں وقت کے فوت ہوجانے اور متجاوز شخص کے غالب ہوجانے کا خوف شامل تھا، نہ پولیس کو بلانے کا امکان تھا اور نہ ہی متجاوز کو آسان طریقے سے دور کرسکتا تھا ، ناچار بورچی خانہ کے چاقو سے اپنی ناموس کی دفاع کی خاطر اس کی جان کے پیچھے لگ جاتاہے ، آخر اس کو قتل کرڈالتا ہے ، پھر خود پولیس میں جاکر اپنے کو قانون کے حوالے کردیتا ہے، کیا شخص زانی کی دیت اس کے اولیاء دم کو دینا پڑے گی؟

جواب: جبکہ دفاع، اجنبی شخص کے قتل سے کم ، ممکن نہ تھا، تو اس کا خون ہدر (رائگان) ہے اور اس کی کوئی دیت نہیں ہے۔

سوال ۹۰۱ -- علی کے ایک بائیس(۲۲) سالہ بہن ہے حسن کئی مرتبہ اس کا رشتہ مانگنے گیا لیکن ہر بار لڑکی کے گھر والوں نے مخالفت کا اظہار کیا، یہاں تک کہ چند مہینے پہلے دوبارہ لڑکی کے گھر رشتہ مانگنے گیا، لیکن پھر بھی انھوں نے رشتہ دینے سے انکار کردیا، اس کے بعد حسن نے یہ دعوا کیا کہ اس نے جبراً علی کی بہن پر تجاوز کیا ہے! علی یہ سن کر غصہ میں آگیا اور غیرت میں آکر گرم اسلحہ (بندوق وغیرہ) سے حسن کو قتل کردیا، یہ پورا قصہ عدالت کی مختلف تاریخوں اور انتظامیہ کے دفتر میں قاتل کی زبان سے بیان ہوا ہے، اس کی بہن نے بھی تھوڑے اختلاف کے ساتھ اسواقع ہ کی تائید کرتے ہوئے حسن کے بیان پر مہر تصدیق ثبت کردی ہے، اس مسئلہ کا حکم کیا ہے؟

جواب: اگر یہ قتل، عمد کا پہلو رکھتا ہو تو اس صورت میںاس کا حکم، قصاص ہے اور اگر بے اختیاری صورت تھی اور اپنی معمولی حالت سے خارج ہوگیا تھا یا خیال کررہا تھا کہ شرعاً متجاوز کا قتل اس کے لئے جائز ہے، تو قصاص نہیں ہے، لیکن دیت ثابت ہے اور اگر صورتحال مشکوک ہو تب بھی دیت ہے قصاص نہیں ہوگا۔

سوال ۹۰۲ - دوافراد نے ایک سولہ (۱۶) سالہ جوان کے ہاتھ پیر باندھ کر اس سے منھ کالا کیا، متجاوزین اس گھناؤنے فعل کے بعد سوجاتے ہیں، اس جوان نے ان کی اس غفلت سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ان میں سے ایک کو لوہے کے ایک ٹکڑے سے ضرب لگاکر اور دوسرے کو ایک تیز دھار والے آلے (چاقو) سے قتل کردیا، اس بات کو کو مدنظر رکھتے ہوئے کہ ملزم نے یہ کام اپنے دفاع اور اس تصور سے انجام دیا ہے کہ مقتولین مہدور الدم ہیں، کیا اس صورت میں ملزم کو قصاص کیا جائے گا؟

جواب: چنانچہ ثابت ہوجائے کہ قاتل نے یہ کام اپنے دفاع کے عنوان سے اور اس خوف کی بنیاد پر کہ مبادا اس پر دوبارہ تجاوز کیا جائے ، انجام دیا ہے تواس صورت میں نہ قصاص ہے اور نہ دیت؛ لیکن اگر ثابت ہوجائے کہ اس کا تصور یہ تھا کہ وہ مہدور الدم ہےں اور وہ حکم خدا کو ان کے اوپر جاری کررہا ہے تو اس صورت میں قصاص نہیں ہے لیکن دیت ہے۔

سوال ۹۰۳ -- ایک شخص آدھی رات کے وقت ایکگھر میں داخل ہوتاہے ، اس وقت مکان مالک اپنی بیوی کے ساتھ کہیں پر گیا ہوا ہوتا ہے جبکہ گھر میں اس کی اولاد میں سے چار نفر موجود ہہوتے ہیں مکان مالک کا اٹھارہ(۱۸) سالہ ایک لڑکا آواز سننے کے بعد نیند سے بیدار ہوجاتا ہے اور سیدھا باورچی خانہ میں جاتا اور چاقو اٹھالیتا ہے، تاریکی شب میں حمام کے بند ہونے کی آواز سن کر خوف کے عالم میں چاقو لئے ہوئے حمام کی طرف بڑھتا ہے وہاں پہنچ کر پتہ چلتا ہے کہ کوئی حمام میں چھپ رہا ہے اور دروازے کو بند کرنے کی کوشش کررہا ہے وہ دروازہ کو اندر کی طرف دھکا دےتا ہے تاکہ دروازہ کھل جائے ، اسی اثنا میں اچانک دوروازہ کھل جاتا ہے اور ایک ۲۹ سالہ شخص فرار کے قصد سے حمام سے نکلتا ہے اسی وقت مالک مکان کے لڑکے ہاتھ فضا میں لہرتاہے اور چاقو سیدھا اس شخص کے دل کے پار ہوجاتا ہے اور اس طرح اس شخص کی موت واقع ہوجاتی ہے اس مسئلہ کا حکم کیا ہے؟
نیز اگر قاتل کی بہن مقتول سے کوئی رابطہ رکھتی تھی اور اس کے بلانے پر وہ آیا تھا، جبکہ قاتل اس امر سے بے خبر تھا تو اس مسئلہ کا کیا حکم ہے؟

جواب: اس صورت میں جبکہ قاتل کا تصور یہ تھا کہ وہ شخص حملہ آور ہے، اس نے اپنے اور اپنے دوسرے بہن بھائیوں سے کی طرف سے دفاع کرتے ہوئے اس کو قتل کردیا تو مقتول کا خون ہدر ہے۔

سوال ۹۰۴ -- مشروع دفاع کے بارے میں فرمائیے:
الف) اگر کوئی شخص کسی کو زخمی یا قتل کردے اور دعویٰ کرے کہ اس نے مقام دفاع میں ایسا کیا ہے لیکن اولیاء دم (مقتول کے وارثین) دعویٰ کریں کہ نہیں یہ مقام دفاع نہیں تھا، کیا اس صورت میں قصاص اور دیت ساقط ہے؟

جواب: اپنے دعوے کو شرعی طریقے سے ثابت نہ کرنے کی صورت میں قصاص کیا جائے گا۔

 ب) کیا کوئی شخص اپنے عزیز واقارب یا دوسروں کی طرف سے دفاع کرتے ہوئے اس حملہ آور کو قتل کرسکتا ہے جس نے ان پر تجاوز کیا تھا ؟

جواب: اگر دفاع کرتے ہوئے ، حملہ آور شخص کو قتل کرنے کے علاوہ اس سے محفوظ رہنے کا کوئی اور راستہ ہو تو یہ کام اس کے لئے جائز ہے؛ لیکن اگر بعد میں اس مطلب کو ثابت نہ کرپائے تو قصاص کیا جائے گا۔

ج) ایک شخص اس خیال سے کہ دوسرا شخص حملہ آور ہے اس کی طرف گولی چلاتا ہے اور اس کو قتل کردیتا ہے، کیا اس کو قصاص کیا جائے گا؟

جواب: مفروضہ سوال کی بنیاد پر فقط دیت ہے۔

سوال ۹۰۵ -- نیچے دیے گئے سوالات کے جواب عنایت فرمائیں:
۱۔ اگر کسی شخص پر کوئی حملہ کرے اور وہ شخص شرعی دفاع کی طاقت نہ رکھتا ہو اور ہم اس کی مدد کو جائیں لیکن اس کی جان خطرے میں ہونے کے باوجود ہماری مدد کو قبول نہ کرے بلکہ انکار کردے اس صورت میں ہمارا وظیفہ کیا ہے؟
۲۔ مفروضہ مسئلہ میں ، اگر ہم اس کی مدد کی خاطر حملہ آور سے بھڑجائیں اور وہ قتل ہوجائے چنانچہ حملہ آور کے خطرے دورکرنا اس کے قتل پر متوقف ہو، کیا محمکہ عدالت میں شرعی دفاع کو دلیل کے طور پر استعمال کرسکتے ہیں؟
۳۔ مذکورہ فرض میں ، یا دوسروں کی عزت وناموس کو خطرے میں دیکھ کر ، اگر شرعی دفاع کی راہ سے کوئی اقدام نہ کرسکیں تواس صورت میں امربالمعروف ونہی عن المنکر کے باب سے کس حد تک مدد اور اقدام کا امکان پاجاتا ہے، اگر حملہ آور کو قتل کرنا پڑجائے، اس فرض کی بنیاد پر کہ دفاع اس کے قتل پر متوقف ہوتو کیا حکم ہے؟

جواب:مسئلہ کے فرض میں اس وقت جبکہ کسی کی جان خطرے میں ہو، مشروع راستے کو اختیار کرنا کوئی مانع نہیں رکھتا۔

سوال ۹۰۶ -- جنایت کرنے والے یا چور سے مقابلہ کے جائز نہ ہونے کی صورت میں ، دفاع کے مدّعی کے ذریعہ جانی یا چور کے قتل کا کیا حکم ہے؟

جواب: یہ ثابت ہونا چاہیے کہ دفاع کے مدّعی کے ذریعہ ، واقعاً چور کو مقام دفاع میں قتل کیا ہے اور اس کے سوا اپنی جان یا مال کی حفاظت کے لئے کوئی اور راستہ نہیں تھا۔

سوال ۹۰۷ -- فلسطینی مسلمانوں کے خود کش حملے ، جیساکہ وہ لوگ اپنے بدن سے بارود باندھ کر دشمن کے مورچوں پر حملہ کرتے ہیں ، شرعی لحاظ سے کیا حکم رکھتا ہے؟ کیا ایرانی لوگ بھی وہاں پر جاکر یہ کام انجام دے سکتے ہیں؟

جواب: اس صورت میں جبکہ فلسطین کے لوگ اپنے دفاع کے لئے اس کے علاوہ کوئی اور راستہ نہ رکھتے ہوں تو جائز ہے اور دوسرے تمام ملکوں کے افراد کا ان کی حکومت کی اجازت کے بغیر اس کام لئے اقدام کرنا جائز نہیں ہے۔

سوال ۹۰۸ -- جب کفار ، کسی ایک اسلامی ملک پر مسلط ہوجائیں اور شعائر اسلامی کا اظہار بھی وہاں پر ممکن نہ ہو، لیکن ان ملکوں کی طرف ہجرت کرنے کے امکانات موجود ہوں جن میں شعائر اسلامی کا اظہار ممکن ہے، کیا اس صورت میں ہجرت واجب ہوجاتی ہے؟

جواب: احتیاط واجب یہ ہے کہ ہجرت کرجائیں۔

حدودکے مقدماتتینتالیسویں فصل امربالمعروف ونہی عن المنکر
12
13
14
15
16
17
18
19
20
Lotus
Mitra
Nazanin
Titr
Tahoma