اسلام میں فرقہ واریت کا رائج ہونا

سایٹ دفتر حضرت آیة اللہ العظمی ناصر مکارم شیرازی

صفحه کاربران ویژه - خروج
ورود کاربران ورود کاربران

LoginToSite

کلمه امنیتی:

یوزرنام:

پاسورڈ:

LoginComment LoginComment2 LoginComment3 .
ذخیره کریں
 

اسلام میں فرقہ واریت کا رائج ہونا

سوال: اسلام میں فرقہ واریت کی لہر کس زمانہ سے شروع ہوئی ؟
اجمالی جواب:
تفصیلی جواب: اسلام نے لوگوں کو اتحاد اور ایک دوسرے سے جدا نہ ہونے کی دعوت دی ہے ، قرآن کریم نے واضح راہنمائی کے ذریعہ تمام انسانوں کو توحید کے ملاک پر جمع ہونے کی سفارش کی ہے اور تفرقہ کو راہ مستقیم سے دور ہونے کا سبب قرار دیا ہے ، خداوند عالم فرماتا ہے : «وَ لا تَتَّبِعُوا السُّبُلَ فَتَفَرَّقَ بِکُمْ عَنْ سَبیلِہِ « (١) ۔ اور دوسرے راستوں کے پیچھے نہ جاو کیونکہ وہ تمہیں راہ خدا سے دور کردیں گے ۔
رسول اسلام (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) بھی اسلام کی عزت و شوکت اورمسلمانوں کو مذہبی اقدار پر زندگی بسر کرنے کی دعوت دیتے تھے ، ہمیشہ اصولی و مبانی پر پابند ہونے کے متعلق گفتگو کرتے اوراپنی امت کو دین سازوں اور بدعت قائم کرنے والوں کے جال میں پھنسنے سے ڈراتے تھے اور ایسے نقصانات سے بچنے کا راستہ بتاتے تھے جس کی وجہ سے اختلافات اور تفرقہ اندازی ہوتی ہے ۔
یہ تمام سفارشیں اس وجہ سے تھیں کہ آسمانی آخری دین کے ماننے والے گزشتہ امتوں کے راستہ کو اختیار نہ کرلیں اور ان کی طرح سے جنگجو فرقوں میں مبتلا نہ ہوجائیں ۔
خداوند عالم فرماتا ہے : «
وَ لا تَکُونُوا کَالَّذینَ تَفَرَّقُوا وَ اخْتَلَفُوا مِنْ بَعْدِ ما جاء َہُمُ الْبَیِّناتُ « ۔ اور خبردار ان لوگوں کی طرح نہ ہوجاو جنہوں نے تفرقہ پیدا کیا اور واضح نشانیوں کے آجانے کے بعد بھی اختلاف کیا۔
لیکن ابھی کچھ ہی زمانہ گزرا تھا کہ اسلامی امت تقسیم ہوگئی اور مسلمان مختلف شاخوں میں تقسیم ہوگئے اور قرآن کریم کی نصیحتوں اور پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کی راہنمائی کے برخلاف فرقہ واریت کی لہر نے پورے اسلامی معاشرہ کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔
فرقہ واریت کی رشد ونمواور اس کے تسلسل نے بہت سے علماء اور دانشورں کو غور وفکر کرنے پر مجبور کردیا اور اس حقیقت کو ا ن کے لئے آشکار کردیا کہ ایک طرف تو مسلمانوں کے درمیان ایک دوسرے سے بدبینی اور جدائی کے اسباب کو ختم کیا جائے اور دوسری طرف اسلام کے اصلی منابع اور مآخذ میں دین کی اصل اہمیت کو اجاگر کیا جائے ۔
واضح ہے کہ ان دونوں باتوں سے بہترین نتائج اخذ کئے جاسکتے تھے اور امت اسلامی کو دشمنوں کے مقابلہ میں لاکر ایک صف میں کھڑا کرسکتے تھے ۔ لیکن افسوس کہ یہ سعی و کوشش ناکام ہوگئی اور بری عادت لکھنے والوں نے اتحاد کے بجائے جدائی اور تفرقہ کا نعرہ لگادیا اور نہ چاہتے ہوئے بھی دشمنوں کے ساتھ مل گئے اور بدصفت لوگوں کے ہم صدا ہو کر مسلمانوں کو دور کرنے اور فرقوں کی تشکیل کیلئے کھڑے ہوگئے (٣) ۔
حوالہ جات:
1- سوره انعام / آيه 153.
2- سوره آل عمران / آيه 105.
3 - على اصغر رضوانى، سلفى گرى و پاسخ به شبهات، ص 9.
تاریخ انتشار: « 1392/07/01 »

منسلک صفحات

سلفیوں کا مسلمانوں کی صفوں میں اختلاف ایجاد کرنا

اسلام میں فرقہ واریت کا رائج ہونا

اسلامی اتحاد کا عملی حل

قرآن کریم کی نظر میں تفرقہ سے بچنے کا راستہ

قرآن کی رو سے تفرقہ کے نتائج

CommentList
*متن
*حفاظتی کوڈ غلط ہے. http://makarem.ir
قارئین کی تعداد : 5045